ممبئی ( نیٹ نیوز) بالی وڈ منشیات کیس کی تحقیقات میں اہم انکشاف سامنے آیا ہے اور وہ انکشاف یہ ہوا ہے کہ صفِ اول کی اداکارہ دیپیکا پڈوکون نے اعتراف جُرم کرلیا ہے۔بھارتی میڈیا کی تازہ ترین رپورٹ کے مطابق دیپیکا پڈوکون نے نارکوٹکس کنٹرول بیورو (این سی بی) کو دیے گئے اپنے بیان میں اس بات کا اعتراف کرلیا ہے کہ اُنہوں اپنی مینیجر کرشمہ پرکاش سے منیشات کے متعلق واٹس ایپ پر گفتگو کی تھی۔

واضح رہے کہ بالی ووڈ منشیات کیس کی تحقیقات کا آغاز ممبئی میں ہوا تھا۔بھارتی میڈیا کے مطابق سشانت سنگھ راجپوت خودکشی سے متعلق منشیات کیس میں دیپیکا اور شردھا کپور ممبئی کے کولابا ایولین گیسٹ ہاؤس پہنچ گئی تھیں جہاں پوچھ گچھ کے لیے نارکوٹکس کنٹرول بیورو کی خصوصی تحقیقاتی ٹیم بھی موجود تھی جو ان اداکاراؤں سے تفتیش کر رہی ہے۔دوسری جانب سارہ علی خان این سی بی کے بیلارڈ اسٹیٹ آفس پہنچیں، جہاں ان سے بھی پوچھ گچھ کی گئی۔بھارتی میڈیا کے مطابق دیپیکا کی مینیجر کرشمہ

پرکاش سے چند روز قبل پوچھ گچھ کی گئی تھی۔نارکوٹکس کنٹرول بیورو نے تفتیش کے دوران راکول پریت سنگھ اور کرشمہ پرکاش سے واٹس ایپ چیٹ کے بارے میں پوچھ گچھ کی جس میں مبینہ طور پر اشارہ کیا گیا تھا کہ دپیپیکا نے منشیات استعمال کی تھیں۔واضح رہے کہ بالی وڈ منشیات کیس کی تحقیقات کا آغاز ریا چکرورتی سے ہوا تھا، سشانت سنگھ خودکشی کیس میں گرفتار ہونے والی ریا چکرورتی نے تحقیقات کے دوران یہ انکشاف کیا تھا کہ سشانت کی سابقہ گرل فرینڈ سارہ علی خان بھی اُن کے ساتھ مل کر منشیات کا استعمال کرتی تھیں۔ریا چکرورتی نے بتایا تھا کہ ناصرف وہ بلکہ اداکارہ سارہ علی خان، راکول پریت سنگھ اور سمن کھمباٹا بھی سشانت کے ساتھ مل کر منشیات استعمال کرتے رہے ہیں۔