لاہور ( نیوز ڈیسک )ورلڈ کپ میں قومی ٹیم کے گزشتہ میچ میں نیوزی لینڈ کوہرانے میں اہم کردار ادا کرنے والے بابر اعظم کا سوشل میڈیا پر بھارتی ٹیم کے کپتان ویرات کوہلی سے موازنہ کیا جارہا ہے اور نئی بحث جاری ہےکہ کرکٹ کی دنیا کا نیا بادشاہ کون ہے۔دونوں کھلاڑیوں کے کرکٹ کے ابتدئی 4سالوں کا ریکارڈ دیکھا جائے تو ویرات کوہلی نے اپنے کرکٹ کیرئیر کے ابتدائی 4سالوں میں 74 اننگز کھیلتے ہوئے 2860رنز اسکور کئے جن میں 8سینچریاں شامل تھیں۔رات کوہلی کی47.62 رنز فی اننگ کی اوسط رہی جبکہ 85.56کا اسٹرائیک ریٹ رہا۔اس کے برعکس قومی ٹیم کے بابر اعظم نے اپنے کرکٹ کیرئیرکے ابتدائی 4 سالوں

میں 68اننگز کھیلتے ہوئے 3072رنز بنائے جس میں 10سینچریاں شامل تھیں۔ بابراعظم کی 52.97رنز فی اننگ کی اوسط رہی جبکہ 85.88 کا اسٹرائیک ریٹ رہا۔ون ڈے میں ایک ہزار، پھر دو ہزار اور اب تین ہزار رنز کا سنگ میل عبور کرتے ہوئے بابر اعظم کوہلی سے بھی آگے نکل گئے ہیں۔واضح رہے ویرات کوہلی نے تین ہزار رنز مکمل کرنے کے لیے زیادہ اننگز کھیلیں جبکہ بابراعظم نے ان سے کم اننگز میں یہ سنگ میل عبور کیا۔تیسرے نمبر پر آکر ون ڈاؤن پوزیشن پر کھیلتے ہوئے بابراعظم اورویرات کوہلی کا کھیلنے کا انداز ایک جیسا ہے۔دوسری جانب پاکستانی ٹیم کے بیٹنگ کوچ گرانٹ فلور نے کہا ہے کہ بابر اعظم رواں ورلڈ کپ میں ویرات کوہلی سے زیادہ اچھی بیٹنگ کررہے ہیں۔بابر اعظم نے بھی ویرات کوہلی کو اپنا آئیڈیل قراردیا ہے۔ ایک پیغام میں اُن کا کہنا تھا کہ ویرات کوہلی سے کوئی مقابلہ نہیں ہے وہ ایک بڑے کھلاڑی ہیں، ان کی ویڈیوز دیکھ کر اپنے کھیل کو بہتر بنانے کی کوشش کرتا ہوں۔قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کھلاڑی محمد یوسف نے بھی بابر اعظم کو ورلڈ کلاس پلیئر قرار دیا ہے۔انہوں نے اپنے ٹوئٹر پیغام میں لکھا ہے کہ ’میں ذاتی طور پر یہ سوچتا ہوں کہ بابر اعظم ویرات کوہلی سے زیادہ بہتر کھلاڑی ہیں یا دنیائے کرکٹ کے دیگر بہترین کھلاڑیوں میں سے ایک ہیں ۔