لاہور ( نصیر سلیم سے ) یہ قدرت کا اظہار ناراضی ہے یا انسان کی بدترین غفلت کا نتیجہ کہ ایک کے بعد ایک آفت اآ رہی ہے . ابھی قوم کیجانب کورونا سے نہیں چھوٹی کہ ٹڈی دل نے سینکڑوں ارب کا نقصان کر دیا ہے . نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ (این ڈی ایم اے) کے ترجمان کے مطابق اس وقت ملک کے 50 اضلاع

میں ٹڈی دل موجود ہے۔ بلوچستان میں 31، خیبر پختونخوا میں 8، پنجاب میں 9 اور سندھ میں 2 اضلاع متاثر ہیں، ٹڈی دل کے حملہ زدہ علاقوں کا سروے اور کنٹرول آپریشن جاری ہے۔24 گھنٹوں میں بلوچستان میں 2200 ہیکٹر رقبے پراسپرے کیا گیا، پنجاب میں 1000، خیبرپختونخوا میں 200 ہیکٹر اور سندھ میں 30 ہیکٹر رقبہ ٹریٹمنٹ کیا گیا۔دوسری جانب اقوام متحدہ کے ادارہ برائے فوڈ اینڈ ایگری کلچر آرگنائزیشن نے خبردار کیا ہے کہ ٹڈی دل کے حالیہ حملوں کے باعث پاکستان میں بڑے پیمانے پر خوراک کی قلت پیدا ہونے کا خدشہ ہے۔