63

اقوام متحدہ نےپاکستان میں سیلاب متاثرین کیلئے 16 کروڑ ڈالرز ہنگامی امداد کی اپیل کر دی

Spread the love

اسلام آباد ( مانیٹرنگ ڈیسک ) پاکستان میں سیلاب متاثرین کے لیے اقوام متحدہ کی جانب سے ہنگامی امداد کی اپیل کر دی گئی۔ وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں دفتر خارجہ میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتریس نے کہا کہ پاکستانی عوام غیر معمولی مون سون کا سامنا کررہے ہیں، ہزار سے زیادہ جانیں جاچکیں، لاکھوں برباد ہوگئے ہیں. مہاجرین کی میزبانی کرنے والے ملک کو درپیش مشکلات پر دل رنجیدہ ہے، سیلاب متاثرین کے لیے پاکستان کو امداد کی ضرورت ہے، پاکستان کو موسمیاتی تبدیلیوں کے شدید اثرات کا سامنا ہے۔اقوام متحدہ نے پاکستان کے لیے 16 کروڑ ڈالرز امداد کی اپیل کی ہے۔
اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے اقوام متحدہ کے ریزیڈنٹ کوآرڈی نیٹر جولیان ہارنیس نے کہا کہ پاکستان میں سیلاب سے تباہی تصورات سے زیادہ ہے، عالمی برادری موسمیاتی تبدیلی سے متاثر پاکستان کے لیے اظہار یکجہتی کرے۔ میں نے سیلاب سے متاثر علاقوں کا دورہ کیا ہے، پاکستان میں سیلاب نے لاکھوں افراد کو متاثر کیا ہے۔

جینیوا میں چین کے مندوب نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں سیلاب سے بھاری جانی و مالی نقصان ہوا ہے۔چینی مندوب کا کہنا ہے کہ چینی صدر، وزیرِ اعظم، وزیرِ خارجہ پاکستان سے اظہار یکجہتی کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ چین نے اضافی 25 ہزار ٹینٹ اور دیگر ضروری سامان پاکستان کو دینے کا فیصلہ کیا ہے، چین پاکستان کو سیلاب متاثرین کے لیے امداد کی فراہمی جاری رکھے گا۔
نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے) کے چیئرمین لیفٹیننٹ جنرل اختر نواز نے بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں اس سال بہار کا موسم نہیں آیا، گرمی شروع ہوگئی، رواں سال مون سون بارشیں وقت سے پہلے شروع ہوئیں۔ پاکستان کو رواں سال چار ہیٹ ویوز کا سامنا رہا، بعض علاقوں میں بارشوں سے 30 سال کا ریکارڈ ٹوٹ گیا، قومی سطح پر ایمرجنسی کا اعلان کیا گیا ہے۔ ملک کے 72 اضلاع کو سیلابی صورتحال کا سامنا ہے، پاکستان میں سیلاب سے 10 لاکھ سے زائد گھر متاثر ہوئے، 20 لاکھ ایکڑ زمین اور 3 کروڑ سے زائد افراد متاثر ہوئے۔
علاوہ ازیں وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ پاکستان گلوبل وارمنگ کی وجہ سے براہ راست متاثر ہو رہا ہے، پاکستان کو عالمی برادری کی مدد کی فوری ضرورت ہے۔ کلاؤڈ برسٹ اور طوفانی بارشوں سے سیلاب آیا، سیلاب زدہ علاقوں میں بحالی اور تعمیر نو کی ضرورت ہے، موسمیاتی تبدیلیوں کے باعث پاکستان میں ہیٹ ویو نے ریکارڈ توڑ دیے۔ موسمیاتی تبدیلیوں کی وجہ سے پاکستان کو شدید بارشوں اور سیلاب کا سامنا ہے، 72 اضلاع میں 3 کروڑ افراد کو سیلاب کی صورتحال کا سامنا ہے۔ سیلاب متاثرین کی کھانے پینے کی اشیاء تک رسائی مشکل ہورہی ہے، امداد پر دوست ملکوں اور عالمی برادری کے شکر گزار ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کو ٹینٹس اور مچھر دانیوں کی فوری ضرورت ہے۔
تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وفاقی وزیر منصوبہ بندی احسن اقبال کا کہناتھا کہ سیلاب زدگان کی بحالی کے لیے 10 ارب ڈالر سے زیادہ درکار ہوں گے۔ مون سون سیزن کے آغاز سے پاکستان میں 1100 سے زیادہ اموات ہوچکی ہیں، پاکستان کو فوڈ سیکیورٹی کے سنگین چیلنجز کا سامنا ہے۔اقوام متحدہ (یو این) ہیومینیٹیرین کوآرڈی نیٹر کی پاکستان کے لیے امداد کی کوششیں قابل تعریف ہیں، بارش اور سیلاب سے کپاس کی پچاس فیصد فصل متاثر ہوئی ہے، امید ہے عالمی برادری پاکستان کی مدد کے لیے آگے آئے گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں